ویڈیو: سرینگر سنٹرل جیل کو گونتا مودے جیل میں تبدیل کیا گیا،اسیران جیل میں غیر محفوظ ، قیدیوں کے رشتہ داروں کا پریس کالونی میں احتجاج

0 142

 

سرینگر: سرینگر سنٹرل جیل میں مقید اسیران کے رشتہ داروں نے آج پریس کالونی سرینگر میں احتجاج کرتے ہوئے کہا ہے کہ سنٹرل جیل سرینگر میں جیل حکام کی جانب سے قیدیوں کے ساتھ نارواسلوک روا رکھے ہوئے ہیں ۔ مظاہرین نے کہا کہ جیل کو بدنام زمانہ گوتانوبے قیدخانے میں تبدیل کیا گیا ہے اورجیل میں ہمارے لخت جگر محفوظ نہیں ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق سرینگر کے تواریخی سنٹرل جیل میں مقید اسیران کے لواحقین نے آج پریس کالونی سرینگر میں احتجاج کرتے ہوئے جیل حکام پر الزام عائد کیا ہے کہ جیل حکام قیدیوں پر مظالم ڈھارہے ہیں اور ان کو بارکوں سے باہر نکال کر برہنہ کرکے پیٹا جارہا ہے ۔ احتجاجی مظاہرین نے اپنے ہاتھوں میں پلے کارڈ اُٹھارکھے تھے جن پر نعرے درج تھے کہ سنٹرل جیل میں ہمارے لخت جگر غیر محفوظ ہے ۔ احتجاجی مظاہرین میں خواتین و مرد وںکی بڑی تعداد موجود تھی جو سنٹرل جیل میں قیدیوں کے ساتھ کئے جارہے غیر انسانیت سلوک کے خلاف احتجاج کررہے تھے ۔ احتجاجی مظاہرین کا کہنا تھا کہ گذشتہ دنوں جیل میں پیش آئے واقعے کے بعد جیل حکام ہتھیار بند اہلکاروں سمیت جیل کی بارکوں میں گھس کر قیدیوں کو روز شام کو پیٹتے ہیں ۔ مظاہرین نے کہا کہ جیل حکام شام کو بارکوں کو ایک ایک کرکے کھول کر قیدیوں کو ظلم و تشدد کا نشانہ بناتے ہیں جبکہ انہیں دن بھر بارکوں میں ہی قید رکھا جارہا ہے ۔ اس کے ساتھ ساتھ طبی سہولیات سے بھی محروم رکھا گیا ہے ۔ احتجاجی مظاہرین کا کہناتھا کہ سرینگر سنٹرل جیل کو بدنام زمانہ گونتا موبے جیل میں تبدیل کیا گیا ہے جہاں پر قیدیوں کے ساتھ غیر انسانی سلوک روارکھا جارہا ہے ۔ اس کے ساتھ ساتھ رشتہ داروں کو بھی اپنے لخت جگروں سے ملنے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے اور جو بھی جیل میں قیدیوں کیساتھ ملاقات کیلئے جاتے ہیں ان کو جامہ تلاشی کے بہانے طرح طرح سے ہراساں کیا جاتا ہے ۔ (سی این آئی )

تبصرے
Loading...