ویڈیو: ایک کے بعد ایک نمازجنازوں کی ادائیگی کے بعدشوپیان دو مقامی جنگجو ئوں اور نوجوان آبائی علاقوں میں سپرد خاک

پُر تشدد مظاہروںکے باوجود نماز جنازوں میں لوگوں کو سیلاب اُمڑ آیا ،کولگام اور شوپیان اور پلوامہ کی فضا ایک مرتبہ پھر سوگوار

0 365

سرینگر: ایک درجن مرتبہ نماز جنازوں کی ادائیگی اور مکمل ہڑتال کے بیچ پلوامہ جھڑپ میں جاں بحق ہوئے دو مقامی جنگجوئوں اور عام شہری کو اسلام وآزادی کے حق میں فلک شگاف نعروں اور مکمل ہڑتال کے بیچ اپنے آبائی علاقوں میں ہزاروں لوگوں کی موجودگی میں سپرد خاک کیا گیا، بندشوں اور کرفیو کے بیچ نماز جنازہ میں ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔سی این آئی کے مطابق ڈلی پورہ پلوامہ میں جمعرات کی اعلیٰ صبح خونین معرکہ آرائی کے دوران3جیش جنگجو ئوں جاں ہو گئے جن میں سے دو مقامی تھے جن کی شناخت نصیر پنڈت ساکنہ کریم آباد پلوامہ،عمر میر ساکنہ بھتی پورہ شوپیان کے بطور ہوئی جبکہ فائرنگ کے تبادلے میں رئیس احمد ڈار ولد جلال الدین ڈار ساکنہ ڈلی پورہ شوپیان بھی از جاں ہو گیا ۔ اسی دوران جونہی مہلوک جنگجوئوں اور نوجوان کی نعشوں کو اپنے اپنے آبائی علاقوں میں پہنچایا گیا تو اس موقعے پر وہاں کہرام مچ گیااور لوگوں کا جم غفیر علاقے میں امڈ آیا اور اس دوران نہ صرف وہاں ماتم اور آہ و زاری کے رقعت آمیز مناظر دیکھے گئے بلکہ علاقے میں لاوڈ اسپیکروں پر اسلام اور آزادی کے حق میں نعرے بازی کا سلسلہ ردن بھر جاری رہا۔ بتایا جاتا ہے کہ اسی دوران مہلوک جنگجوئوں کے آبائی علاقوں میں احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع ہوا جس دوران نوجوانوں نے اسلام و آزادی کے حق میں نعرہ بازی کی ۔ اسی دوران معلوم ہوا ہے کہ مکمل ہڑتال کے بیچ شوپیان اور پلوامہ کے درجنوں علاقوں سے تعلق رکھنے والے ہزاروں لوگوں نے مہلوک جنگجوئوں کے آبائی علاقوں کا رخ کیا جس دوران انہوں نے جاں بحق جنگجوئوںاور عام نوجوان کے نماز جنازے ادا کئے گئے ۔عین شاہدین کے مطابق لوگوں کی بھاری تعداد کے پیش نظر قریب ایک درجن مرتبہ نما ز جنازہ ادا کیا گیا ،۔معلوم ہوا ہے کہ سخت ترین بندشوں اور کرفیو کے باوجود جاں بحق جنگجو ئوںکے نماز جنازوں میں ہزاروں لوگوں کی تعداد میں شرکت کی جس کے بعد انہیں اپنے آبائی مقبروں میں پْر نم آنکھوں کے ساتھ سپرد خاک کیا گیا ۔اس دوران جاں بحق جنگجوئوں کے یاد میں جنوبی کشمیر میں مکمل ہڑتال رہی جس کے نتیجے میں کاروباری سرگرمیاں معطل رہیں، دکانیں، تجارتی مراکزا ور دفاتر وغیرہ بند رہے جبکہ گاڑیوں کی آمدروفت بھی بری طرح سے متاثر رہے ۔ ( سی این آئی )

تبصرے
Loading...