ویڈیو:‌سال 2016سے نظر بند سرجان برکاتی کی رہائی کا مطالبہ

اہل خانہ اور رشتہ داروں کا پریس کالونی سرینگر میں احتجاج

0 28

سرینگر: سال 2016کی عوامی ایجی ٹیشن کے دوران گرفتار کئے گئے سرجان برکاتی کے اہل خانہ اور رشتہ داروں نے پریس کالونی سرینگر میں احتجاج کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ سرجان برکاتی کی رہائی جلد از جلد عمل میںلائی جائے۔سی این آئی کے مطابق سال 2016سے نظر بند جنوبی کشمیر سے تعلق رکھنے والا سرجان برکاتی کے اہل خانی اور رشتہ داروں نے بدھ کو سرینگر کی پریس کالونی میں زور دار احتجاج کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ ان کی رہائی جلد از جلد عمل میں لائی جائے ۔ اس موقعہ پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے سرجان برکاتی کی بیٹی صغریٰ برکاتی نے کہا کہ ان کے والد کو سال 2016میںگرفتار کیا گیا تب سے وہ نظر بند ہے اور انہیں رہا نہیں کیا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ ان کے کہا سال 2016میں ان کی گرفتاری کے بعد ان پر 56کیس دائر کئے گئے جس کے بعد ان کو پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت جیل منتقل کیا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی انتظامیہ ان کے والد پر فرضی کیس دائر کرکے ان کو پھنسا رہی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ ان کے والد کی نظر بندی کے باعث انہیں گھر میں کافی مشکلات کا سامنا ہے جبکہ حالیہ دنوں ان کی ماں پر گھر کے باہر نا معلوم افراد نے حملہ کیا ۔ صغریٰ برکاتی نے کہا کہ اگر ان کی ماں کو کچھ بھی ہوا تو اس کی ذمہ داری ریاستی انتظامیہ پر عائد ہو گئی ۔ انہوں نے کہا کہ سال 2016سے ان کے والد سرجان برکاتی کی مسلسل نظر بندی کے باعث ان کو کافی مشکلات کا سامنا ہے جبکہ ان کی پڑھائی بھی بری طرح متاثر ہوئی ہے ۔ انہوں نے ریاستی انتظامیہ خاص کر گورنر ستیہ پال ملک سے اپیل کی کہ ان کے والد سرجان برکاتی کو رہائی کرانے میں اپنا رول ادا کرے ۔ ( سی این آئی )

تبصرے
Loading...