ویڈیو:مولوی محمد فاروق اور خواجہ عبدالغنی لون کی برسی پر مجوزہ عید گاہ مارچ پر قدغن

شہر خاص کے مختلف علاقوں میں انتظامیہ نے بندشیں عائد کی، لوگ گھروں میں محصور

0 98

سرینگر// مرحومین میر واعظ کشمیر مولوی محمد فاروق اور عبدالغنی لون کی برسی کے حوالے سے علیٰحدگی پسند جماعتوں کی جانب سے عید گاہ میںاجتماعی فاتحہ خوانی اور خراج عقیدت کی تقریب منعقد کرنے پر قدغن لگاتے ہوئے انتظامیہ سے شہر خاص میں سخت بندشیں عائد کی تھیں جس دوران کسی بھی شہری کو چلنے کی اجازت نہیں دی جارہی تھی جبکہ جگہ جگہ کھار دار تار اوررکاوٹیں سڑکوں پر کھڑا کرکے رکھ دی گئی ہے ۔کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق مرحومین میر واعظ کشمیر مولوی محمد فاروق اور خواجہ عبدالغنی لون کی برسی کے سلسلے میں متحدہ مزاحمتی قیادت کی جانب سے دی گئی ہڑتالی کال اور عید گاہ مارچ کی کال کے پیش نظر انتظامیہ نے شہر خاص کے مختلف علاقوں میں کرفیو جیسی پابندیاں عائد کرتے ہوئے لوگوں کی نقل و حمل پر پابندی عائد کی ۔حکام نے منگل کو سرینگر کے پائین علاقوں میں علیحدگی پسندوں کا مجوزہ عید گاہ مارچ روکنے کیلئے پابندیاں نافذ کی گئی ہیں۔حریت کانفرنس (ع) نے عید گاہ میں جامع مسجد سے عید گاہ میں قائم مزار شہدا ء تک سابق میر واعظ مولوی محمد فاروق اور سابق حریت لیڈر عبد الغنی لون کی یاد میں مارچ کا اعلان کیا تھا ۔ پابندیوں کے نانتیجے میں نوہٹہ، گوجوارہ، حول، بہوری کدل، راجوری لدل، صراف کدل، نالہ مار اور عید گاہ میں لوگ اپنے گھروں میں محصور ہوکے رہ گئے جبکہ جگہ جگہ پولیس اور فورسز کی بھاری نفری تعینات تھی جو آنے جانے کی کسی کو اجات نہیں دے رہے تھے ۔ واضح رہے کہ سابق میرواعظ کو1990جبکہ لون کو2002میں حملہ آئوروں نے جاں بحق کیاتھا۔موجودہ میرواعظ اور حریت کانفرنس (ع) کے چیئر مین میرواعظ عمر فاروق کے والد مولوی محمد فاروق کو21مئی1990 کواْن کے گھر میں جبکہ سجاد غنی لون اور بلال غنی لون کے والد عبد الغنی لون کو21مئی 2002کو مزار شہدا میں منعقدہ ایک تقریب کے دوران گولیاں مار کر جاں بحق کیا گیا۔سرکاری ذرائع کے مطابق علیحدگی پسندوں کے مارچ کو روکنے کیلئے خانیار،رعناواری،نوہٹہ،ایم آر گنج اور صفا کدل پولیس تھانوں کے ماتحت آنے والے علاقوں میں پابندیاں عاید کی گئی ہیں۔شہر کے باقی علاقوں میں بھی پولیس اور فورسز کی اضافی تعیناتی عمل میں لائی گئی ہے۔جبکہ عید گاہ کی جانب جانے والے تمام راستوں کو سیل کردیا گیا تھا۔ ( سی این آئی

تبصرے
Loading...