وادی میں سیاحتی سیزن ختم ہونے کے قریب ، سیاحوں کی تعداد نہ ہونے کے برابر

سیاحت سے جڑے لاکھوں لوگ ذہنی کوفت کے شکار، متعلقہ محکمہ سیاحوں کو کشمیر کی طرف راغب کرنے میں ناکام

0 67

سرینگر/ وادی میںسیاحتی سیزن ختم ہونے کو پہنچ چکا ہے تاہم سیاحوں کی تعداد کافی کم ہے جس کی وجہ سے سیاحت سے جڑے افراد شدید زہنی کوفت کے شکار ہوگئے ہیں ۔ سیاحت سے جڑے افراد نے اس حوالے سے متعلقہ محکمہ پر الزام عائد کیا ہے کہ محکمہ سیاحوں کو کشمیر کی طرف راغب کرنے میں ناکام ہوچکا ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیاکے مطابق وادی کشمیر جو ایک وقت سیاحوں کی آمجگاہ ہونے پر دنیا بھرمیں مشہور تھی اور یہاں کی سیر کیلئے دنیا کے کونے کونے سے لوگ سیر و تفریح کیلئے آتے تھے جس کی وجہ سے کشمیر ٹوراز م جڑے افراد خاصی کمائی کرلیتے تھے لیکن اب حالات مختلف ہیں یہاںپر ٹورازم شعبہ سے وابستہ افراد اپنی نگاہیں سیاحوں کو دیکھتے دیکھتے تھکتی ہے تاہم سیاح نہیں آتے ۔ وادی کشمیر میں سیاحتی سیزن اب ختم ہونے کو پہنچ رہا ہے تاہم یہاں پر آنے والے سیاحوں کی تعداد نہ ہونے کے برابر ہے جس کی وجہ سے شعبہ سیاحت سے جڑے افراد کافی پریشانیوں میں مبتلاء ہوچکے ہیں ۔ سی این آئی کے ساتھ بات کرتے ہوئے کئی افراد نے کہا کہ کشمیر کے حالات کو غلط انداز میں پیش کرنے سے یہاں پر سیاح آنے میں دلچسپی نہیں لے رہے ہیں ۔ انہوںنے اس کے ساتھ ساتھ محکمہ سیاحت کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ محکمہ سیاحوں کو کشمیر کی طرف راغب کرنے میں ناکام ہوچکا ہے ۔جس کی جہ سے آج کشمیر سیاحت کو کافی نقصان پہنچا ہے ۔ سیاحوں کی قلیل تعداد اس وقت وادی میں موجود ہے تاہم جو امید لگائی جارہی تھی اس کے حساب سے ٹورسٹ یہاں نہیں آرہے ہیں ۔ وادی میں سیاست سے لاکھوں لوگ جڑے ہیں جن میں شکارے والے، گاڑی والے ،ہوٹل مالکان ،شوروم اور دکانداروں کے علاوہ دیگر افراد جن میں کاری گر وغیرہ شامل ہیں سیاحوں کی کمی سے پریشان ہے اور ان کا کام نہ ہونے کے برابر چل رہا ہے ۔ ( سی این آئی )

تبصرے
Loading...