میر واعظ مولوی عمر فاروق کو دلی طلب کرنے کاکوئی جوازنہیں: مفتی ناصر الا سلام

48

اس طرح کی کاروائیاں کشمیر میں مذید خون خرابے کا باعث بن جائیگی۔مسلم پرسنل لاء بورڈ کا ایک خصوصی اجلاس

سرینگر(پی آر) :‌ مسلم پرسنل لاء بورڈ کا ایک اہم اجلاس مفتی اعظم جموں کشمیر مفتی ناصر الاسلام کی صدارت میں سرینگر میں منقعد ہوا ۔اس میں وادی کے تمام اطراف اکناف جموں ،راجوری ،پونچھ ،بھدواہ ،کشتوار اور جموں سے آئے ہوئے معزز ممبران نے شرکت کی کشمیر کے پُر تشدد حالات پر سنجیدگی کے ساتھ غور خوض کیا گیا ۔مندوبین نے کہا کہ ایک طرف سے سرحدوں پر جنگی جنوں نے جنم لیا ہے ،وہی ہندوستان اور پاکستان کے مابین کشیدہ تعلقات کی وجہ سے انتشار کے علاوہ خوف اور دہشت کاماحول پیدا ہوا ہے ۔اگردونوں ممالک کے درمیان جنگ ہوتی تو یہ پوری عالم انسانیت کے لئے تباہی اور بربادی کا پیغام ہوگا .
ضرورت اس بات کی ہے کہ تمام مسائل بشمول کشمیر کو بات چیت کے ذریعے حل کیا جانا چاہے ،مفتی ناصرالا سلام نے کہا کہ جماعت اسلامی پر بلا وجہ پابندی کے اثرات منفی ثابت ہونگے ۔جماعت اسلامی کے بعد مذہبی و سیاسی قائدین کو تنگ طلب کرنے سے نہ کشمیر کا مسئلہ حل ہوگا اور ناہی وادی کے حالات میں سُدھار آئیگا بلکہ حالات کے مزید بگڑنے کا احتمال پیدا ہوگا.
لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ دلی حکومت ایسی کوئی کاروائی انجام نہ دیں جن کی وجہ سے کشمیر کے حالات کے مزید خراب ہونے کا احتمال پیدا ہوجائے ہمارے مذہبی قائدین لوگوں کے دلوں میں بستے ہیں اُن کا الگ مقام ہے لہذا اُن کی تذلیل نا قابل قبول ہوگی مفتی ناصر الا سلام نے یہ مطالبہ کیا ہے کہ مذہبی و سیاسی قائدین کو تنگ طلب کرنے کے بجائے اصل مسئلے پر توجہ دی جائے اور مسئلہ کشمیر کے حل کی جانب پہل کی جائے ۔کیونکہ کشمیر کے مسئلے کی وجہ سے بہت سارے انسانی جانیں ضائع ہوئی اور آج بھی انسانیت کا خون ارزان ہورہا ہے ۔

تبصرے
Loading...