شبیر احمد شاہ، آسیہ اندرابی اور مسرت عالم این آئی اے کی تحویل میں

سنگبازی کیلئے رقومات کی فراہمی سے متعلق پوچھ تاچھ شروع

0 169

سرینگر: مزاحمتی لیڈران شبیر احمد شاہ، مسرت عالم بٹ اور سیدہ آسیہ اندرابی کو این آئی اے نے 2016میں ہوئی خراب حالات اور سنگبازی کے حوالے سے رقومات کی فراہمی کیلئے پوچھ تاچھ کیلئے اپنی تحویل میں لے لیا ہے ۔ اس ضمن میں این آئی اے نے کورٹ سے دس دنوں کی ریمانڈ حاصل کی ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق این آئی اے نے 2016میں وادی کشمیرمیں پیدا شدہ صورتحال کو مزاحمتی جماعتوں کو ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے اس حوالے سے کئی لیڈران کو اپنی تحویل میں لیکر ان سے پوچھ تاچھ شروع کی ہے ۔ ذرائع کے مطابق این آئی اے نے 2016کے پُرتشدد واقعات اور سنگباری کے واقعات کے حوالے سے سینئر مزاحمی لیڈر اور فریڈم پارٹی کے سربراہ شبیر احمد شاہ ، مسرت عالم بٹ، اور سیدہ آسیہ اندرابی کو اپنی تحویل میں لے لیا ہے ۔ ذرائع کے مطابق لیڈران سے وادی میں سنگبازی کے حوالے سے رقومات کی فراہمی کے بارے میں بھی پوچھ تاچھ کی جارہی ہے ۔ منگلو کے روز این آئی نے قومی جانچ ادارہ (نیشنل انوسٹیگشن ایجنسی) کی عدالت سے اگرچہ 15روزہ ریمانڈ کامطالبہ کیا تھا تاہم کورٹ نے مذکورہ لیڈران کو 10دنوں تک این آئی اے کی تحویل میں دیا ۔ ذرائع کے مطابق موصوفین سے رقومات کے حوالے سے پوچھ تاچھ کی جائیگی ۔واضح رہے کہ 2016میں وادی کشمیر میں اُس وقت حالات خراب ہوئے جب معروف عسکری کمانڈر برہان وانی اپنے ایک اور ساتھی سمیت ایک مختصر سی جھڑپ میں جاں بحق ہوگیا تھا اور اس ہلاکت کے خلاف وادی بھر میں شدید احتجاجی لہر چھڑ گئی ۔ جس دوران ایک سو سے زائد افراد جاں بحق ہوئے جبکہ وادی میں کئی ماہ تک مسلسل ہڑتال ،بندشیں رہیں ۔

تبصرے
Loading...