سیاحوں کو کشمیر کی طرف راغن کرنے کیلئے محکمہ ٹورازم کے افسران کے ملکی و غیر ملکی دوروں پر کروڑوں خرچ

وادی کشمیر میں سیاحوں کی تعداد نہ ہونے کے برابر ، ہوٹل ، شکارے والے اور ہاوس بوٹ مالکان پریشان

0 114

سرینگر: کشمیر کی طرف سیاحوں کو راغب کرنے کیلئے محکمہ ٹوراز م کے افسران اگرچہ ملکی و غیر ملکی دورے کررہے ہیں تاہم ان دوروں پر زرکثیر خرچ کرنے کے بعد بھی وادی کشمیر میں سیاحت بلکل ٹھپ ہے جس کی وجہ سے ہوٹل و رستوران مالکان، شکارے والے ، ہاوس بوٹ والے ، ہینڈی کرافٹس سے جڑے تاجر اور دیگر متعلقہ افراد پریشان ہے ۔کئی افراد نے بینکوں سے قرضہ لیکر ہوٹل اور دکانات کرائے پر لیئے ہیں اور سیاحوں کے انتظار میں بیٹھے ہیں تاکہ وہ بینکوں کے قرضہ کو اداکرسکیں لیکن رواں برس کا پانچواں ماہ شروع ہونے کے بعد بھی یہاں سیاحوں کی تعداد کافی کم دکھائی دے رہی ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق محکمہ سیاحت جموں و کشمیر کے افسران آئے روز ملی و غیر ملکی دوروں پر اسلئے کروڑوں روپے خرچ کررہے ہیں تاکہ وہ کشمیرٹورازم کو زندہ رکھ سکیں اور زیادہ سے زیادہ ٹورسٹوںکو کشمیر آنے پر آمادہ کریں تاہم ان دوروں پر کروڑوں روپے صرف ہونے کے باوجود بھی زمینی سطح پر کوئی تبدیلی دکھائی نہیں دے رہی ہے جس کی وجہ سے کشمیر سیاحت سے جڑے افراد بے حد پریشان ہے جن میں ہوٹل و رستوران والے، ہاوس بوٹ وشکارے والے، دستکار، ٹرارنسپورٹر اور دیگر متعلقہ افراد روزگار سے محروم ہوچکے ہیں اورانکے اہلخانہ فاقہ کشی کی کگار پر پہنچ گئے ہیں ۔ سی این آئی کے ساتھ بات کرتے ہوئے سیاحت سے جڑے افراد نے کہا ہے کہ محکمہ سیاحت اگر کشمیر کے حالات کے حوالے سے اشتہاری مہم چلاتے اور کشمیر آنے کی خواہش رکھنے والے افراد تک یہ پیغام پہنچ جاتا ہے کہ یہاںکے حالات بہتر ہے تو شائد تباہ حال ٹورزم کو بچایا جاسکتا ہے ۔ انہوںنے کہا کہ ملکی و بیرون ملک دوروں پر زر کثیر خرچ کرنے کے بجائے اور اخبارات اور ٹیلی ویژن چینلوں کو اشتہار ی مہم پر روپے خرچ کئے جاتے تو جو نیشنل میڈیا کشمیر کے حوالے سے منفی پروپگنڈا کررہا ہے اس پر کا اثر زائل ہوجاتا اور لوگ کشمیر کی طرف پھر رُخ کرنے میں ہچکچاتے نہیں۔انہوںنے کہا کہ سیاحتی سیزن کاانتظار گزشتہ آٹھ ماہ سے تھا اورجب موسم اور حالات بہتر ہوئے تو بھی سیاح یہاں نہ ہونے کے برابر ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ کشمیر ٹورزم سے وابستہ افراد نے بینکوں سے قرضہ لیکر ہوٹل کرائے پر لئے ہیں ۔مال اوردکانیں لے لی ہے تاہم سیاحوں کا کشمیر کی طرف منفی رجحان سے انہیں بھاری نقصانات سے دوچار ہونا پڑرہا ہے ۔ انہوںنے کہاکہ سرکار بھی کشمیر سیاحت کو بچانے کیلئے کوئی ٹھوس اقداما ت نہیں اُٹھارہی ہے ۔( سی این آئی )

تبصرے
Loading...