سمبل سانحہ کیخلاف ضلع بڈگام اور ماگام کے بیشتر علاقوں میں ہڑتال جاری

کئی مقامات پر چوتھے روز بھی مظاہرے ، وادی کے بیشتر تعلیمی اداروں میں دوسرے روز بھی تدریسی عمل متاثر

0 40

سرینگر:سمبل باندی پورہ سانحہ کے خلاف بڈگام اور ماگام کے بیشتر علاقوں میں مسلسل احتجاجی ہڑتال رہی ہے جس کے باعث تجارتی و کاروباری سرگرمیاں معطل رہی ۔ادھر واقعہ کے خلاف بدھ کو بھی کئی مقامات پر احتجاجی مظاہرے ہوئے جس دوران مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ متاثر بچی کو انصاف فراہم کیا جائے ۔ اسی دوران طلبہ کے احتجاجی مظاہروں کے پیش نظر سرینگر سمیت وادی کے شمال و جنوب میں اعلیٰ تعلیمی اداروں میں درس و تدریس کی سرگرمیاں مسلسل دوسرے روز بھی معطل رہی ۔ سی این آئی کے مطابق سمبل بانڈی پورہ سانحہ کے خلاف احتجاجی مظاہروں کی لہر کے بیچ بڈگام اور ماگام کے کئی علاقوں میں بدھ کو احتجاجی ہڑتال جاری رہی ۔ احتجاجی ہڑتال کے بیچ دونوں قصبوں میں تمام تجارتی و کاروباری سرگرمیاں متاثر رہی جبکہ سڑکوں سے ٹریفک کی نقل و حمل بھی معطل ہو کر رہ گئی ۔ اطلاعات کے مطابق بڈگام اور ماگام میں کاروباری سرگرمیاں معطل ،جبکہ تعلیمی ادارے بند ہیں۔دونوں قصبہ جات میں سڑکوں سے ٹریفک بھی غائب ہے۔دونوں قصبوں میں حکام نے حساس مقامات پر فورسز اہلکاروں کی تعیناتی عمل میں لائی ہے۔تاہم کسی بھی جگہ سے کسی نا خوشگوار واقعہ کی کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ہے ۔ ادھر سانحہ کے خلاف بدھ کو بھی وادی کے مختلف علاقوں سے احتجاجی مظاہروں کی خبریں موصول ہوئی ہے جس دوران احتجاجی مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ سانحہ میں ملوث شخص کے خلاف کڑی سے کڑی قانونی کارروئی عمل میں لائی جائے تاکہ متاثر ہ بچی کو انصاف فراہم ہو سکے ۔ اسی دوران طلبہ کے احتجاجی مظاہروں کے پیش نظر انتظامیہ نے بدھ کو وادی کشمیر کے اکثر کالجوں اور ہایئرسیکنڈری سکولوں کو بند رکھنے کا فیصلہ کیا تھا جس دوران سرینگر کے دو کالجوں ،بانڈی پورہ ، گاندربل ،بارہمولہ، سوپور، اننت ناگ، کپوارہ، بڈگام اضلاع میں قائم کالجوں اور ہائی و ہائیر سیکنڈری سکولوں میں تعلیمی سرگرمیاں متاثر رہی ۔واضح رہے کہ منگل کو سمبل سانحہ کیخلاف طالب علموں کے مظاہروں میں شدت آئی تھی یہاں تک کہ سرینگر کے دو کالجوں کے باہر مظاہرین اور پولیس کے مابین جھڑپیں بھی ہوئیں۔

تبصرے
Loading...