حوالہ رقومات کے بارے میں این آئی اے کی تحویل میں پوچھ تاچھ کے بعد

شبیر شاہ، مسرت عالم اور آسیہ اندرابی 12جولائی تک جوڈیشل ریمانڈ میں

0 16

سرینگر/14جون/سی این آئی/ این آئی اے کی تحویل میں پوچھ تاچھ کے بعد دلی کی ایک عدالت نے 3کشمیری مزاحمتی لیڈران کو جوڈیشل ریمانڈ میں بھیج دیا ہے اس دوران سیدہ آسیہ اندرابی نے خرابی صحت کے باعث ویڈیوکانفرنس کے ذریعے شنوائی کی درخواست کی جس پر عدالت نے چھٹیوں کے بعد غور کرنے کو کہا ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق کشمیری مزاحمتی لیڈران شبیر احمد شاہ، مسرت عالم بٹ اور سیدہ آسیہ اندرابی کو دلی کی ایک عدالت نے 12جولائی تک جوڈیشل ریمانڈ میں بھیج دیا ہے ۔ تینوں لیڈران اب تک این آئی اے کی تحویل میں تھے جہاں ان سے حوالہ رقومات کے بارے میں پوچھ تاچھ کی جارہی تھی۔ معلوم ہوا ہے کہ دلی کی ایک عدالت نے جمعہ کو تین کشمیری علیحدگی پسند لیڈران شبیر شاہ، مسرت عالم اور آسیہ اندرابی کو 12جولائی تک جوڈیشل حراست میں بھیجدیا۔ مذکورہ تینوں علیحدگی پسند لیڈران کومبینہ فنڈنگ کیس میں قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) نے گرفتار کر رکھا ہے۔ پٹیالہ ہائوس کورٹ ، دلی میں ایڈیشنل سیشن جج انیل آنٹل کی عدالت نے تینوں ملزموں کو 12جولائی تک جوڈیشل حراست میں بھیج دیا۔اس دوران معلوم ہوا ہے کہ دوران شنوائی سیدہ آسیہ اندرابی نے عدالت سے درخواست کی کہ اْنہیں خرابی صحت کی بنا پرآئندہ ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے عدالت کے سامنے پیش کیا جائے۔ اس موقع پر عدالت نے آسیہ اندرابی کے وکیل سے کہا کہ وہ اس ضمن میں چھٹیوں کے بعد عدالت کومطلع کریںتاکہ آسیہ اندرابی کی درخواست پر غور کیا جاسکے ۔یاد رہے کہ شبیر شاہ کوانفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ نے جولائی2017کو سرینگر سے گرفتار کرکے دلی پہنچایا جہاں اْسے دس روز قبل این آئی اے نے پوچھ تاچھ کیلئے اپنی تحویل میں لے لیا۔اسی طرح آسیہ اندرابی بھی 2017سے ہی دلی میں مقید ہیں جبکہ مسرت عالم چالیس دن کو چھوڑ کر2010سے مسلسل ایام اسیری کاٹ رہے ہیں۔ اْنہیں حالیہ دنوں ریاستی جیل سے دلی منتقل کیا گیا جب اْنہیں بھی این آئی اے نے مبینہ فنڈگ کیس کے سلسلے میں حراست میں لے لیا۔واضح رہے کہ این آئی اے نے تینوں لیڈران کو گذشتہ ماہ ایک بار پھر اپنی تحویل میں لیکر ان سے حوالہ رقومات کے حوالے سے دوبارہ پوچھ تاچھ شروع کی ۔(سی این آئی )

تبصرے
Loading...