بھارتی انڈر 19کرکٹ ٹیم سے کشمیری کھلاڑی باہر،تاریخ پیدائش کی غلط سند پیش کرنے پر دو برس کی پابندی بھی عائد

0 34

انڈر19کشمیری کرکٹ کھلاڑی کو بھارتی انڈر 19کرکٹ ٹیم سے باہر کردیا گیا ہے ۔ کشمیری کرکٹر پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ انہوںنے تاریخ پیدائش کی غلط سند پیش کی ہے ۔ موصوف پر دو برس کی پابندی بھی لگائی گئی ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق بی سی سی آئی نے ایک کشمیری انڈر 19کرکٹ کھلاڑی راسخ سلام کو بھارتی انڈر نائنٹین کرکٹ ٹیم سے باہر کا راستہ دکھاتے ہوئے اس پر دو برس کی پابندی بھی لگائی ہے ۔ ایسے میں راسخ سلام کی جگہ انگلینڈ میں 21 جولائی سے ہونے والی سہ رخی ونڈے سیریزکے لئے پربھات موریہ کوٹیم میں شامل کیا گیا ہے اور راسخ سلام جموں وکشمیرسے تعلق رکھتے ہیں اوروہ اس سال آئی پی ایل میں ممبئی انڈینس کی طرف سے کھیلتے نظرآئے تھے۔ٹیم کی کپتانی پرییم گرگ کے پاس ہے۔ راسخ سلام کا تعلق جموں وکشمیر سے ہے۔ انہیں ظہیرخان نے کیپ دیا تھا۔ اس وقت ان کی عمر17 سال دن تھی اوروہ ممبئی کے لئے سب سے کم عمرمیں ڈیبیوکرنیوالے کرکٹرتھے۔ بی سی سی آئی کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے ‘بی سی سی آئی نے راسخ سلام پردو سال کی پابندی عائد کی ہے کیونکہ انہوں نے بی سی سی آئی کوعمرکا فرضی سرٹیفکیٹ جمع کیا تھا’۔ ٹیم 15 جولائی کوانگلینڈ کے لئے روانہ ہوگی۔راسخ سلام جموں وکشمیرکے کلگام ضلع کیاشمجی گاوں کے رہنے والے ہیں۔ سری نگرکے شیرکشمیراسٹیڈیم میں جموں وکشمیر کرکٹ ایسوسی ایشن کی طرف سے ٹیلنٹ ہنٹ کیمپ کا انعقاد کیا گیا تھا۔ اس میں راسخ بھی شامل ہوئے تھے۔ کیمپ کے دوران ٹیم انڈیا کیسابق ٹسٹ کرکٹراورجموں وکشمیر ٹیم کے کپتان اورمینٹرعرفان پٹھان نے انہیں دیکھا اور کافی تعریف کی تھی۔ آئی پی ایل میں انہوں نے ممبئی کی طرف سے ایک میچ بھی کھیلا تھا۔راسخ سلام ڈارآئی پی ایل میں کھیلنے والے تیسرے کشمیری کھلاڑی ہیں۔ راسخ سلام اپنی سوئنگ گیند بازی کے لئے جانے جاتے ہیں، اس لئے ممبئی انڈینس نے پہلے ہی میچ میںانہیں آزمایا۔ راسخ سلام نے سال 2018 اور2019 میں کرکٹ کیریئرکی شروعات کی۔ انہوں نے گزشتہ کرکٹ سیزن میں جموں وکشمیرکے لئے وجے ہزارے ٹرافی، رنجی ٹرافی اورسید مشتاق علی ٹرافی میں ڈیبیوک میں بھی حصہ لیا۔ (سی این آئی )

تبصرے
Loading...