بالا کوٹ ائر سٹرائک کے بعد عسکری تنظیموں کے حوصلے ٹوٹ گئے ، دراندازی میں کمی / نیتا نند رائے

آنے والے وقت میں ریاست کے نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے کیلئے اقدامات اُٹھائے جائیں گے

0 25

سرینگر: مرکزی سرکار نے دعویٰ کیا ہے کہ بالاکوٹ ائر سٹرائک کے بعد دراندازی میں کافی کمی آئی ہے جبکہ وادی میں بھی ملٹنسی کے واقعات کا گراف گرگیا ہے ۔ اس کے ساتھ ساتھ کشمیر میں علیٰحدگی پسند جماعتوں کے خلاف کریک ڈاون کے بعد الگائو واد تقریبا ختم ہوچکا ہے ۔ کرنٹ نیوز آف انڈیا کے مطابق مرکزی وزیر مملکت برائے داخلہ امور، نتیا نند رائے نے منگل کو پارلیمنٹ میں کہا کہ پاکستان پر بالا کوٹ ائر اسٹرئیک کے بعد جموں کشمیر کی مجموعی سیکورٹی صورتحال میں نمایاں بہتری آئی ہے یہاں تک کہ دراندازی کے واقعات میں بھی43فیصد تک کمی واقع ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ ریاست جموں و کشمیر پر مرکزی سرکار کی نگاہیں جمی ہوئی ہے ملٹنسی اور علیحدگی پسندی کو پھر سے پیر جمانے کی اجازت نہیں دی جائے گی ۔رائے نے کہا کہ بالاکوٹ ائر سٹرائک سے کئی جنگجوئوں کے تربیتی کیمپ تباہ ہوچکے ہیں جس کے نتیجے میں اُس پار بیٹھے عسکریت پسندوں کے سربراہاں میں خوف پیدا ہوا ہے اسلئے اب سرحد پار سے دراندازی کے واقعات میں کمی آئی ہے ۔رائے کا یہ بیان ایک تحریری سوال کے جواب میں سامنے آیا جس میں پوچھا گیا تھا کہ کیا بالا کوٹ میں انڈین ایئر فورس کی سرجیکل اسٹرئیک کے بعد دراندازی کے واقعات میں کمی آئی ہے؟وزیر موصوف نے یہ بھی کہا کہ مرکزی سرکار نے در اندازی کے بارے میں زیرو ٹالرنس کی پالیسی اختیار کر رکھی ہے اور اس کیلئے ریاستی سرکار کو ساتھ لیکر اقدامات اْٹھائے گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ریاست سے ملٹنسی کے خاتمہ کے ساتھ ساتھ مرکز ریاست کی تعمیر و ترقی کے کئی اقدامات اُٹھارہے ہیں جبکہ ریاست سے بے روزگاری اور غربت کو دور کرنے کیلئے نوجوانوں کو روزگار کے مختلف مواقعے فراہم کئے جارہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ آنے والے وقت میں کشمیری نوجوانوں کو فوج ، فورسز اور پولیس میں بھرتی کیا جائے گا تاکہ یہاں تعلیم حاصل کرنے والے نوجوانوں کو تعلیم سے فارغ ہونے کے بعد حصول روزگار کیلئے در در بھٹکنا نہ پڑے ۔ اور اس سلسلے میں جلد ہی ایک بھرتی مہم چلائی جائے گی۔

تبصرے
Loading...