امریکا بھارت میں6ایٹمی تنصیبات لگائے گا،بھارت کی نیوکلیئر سپلائرز گروپ رکنیت میں تعاون کی بھی یقین دہانی

41

سرینگر: امریکا نے بھارت کو یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ نئی دہلی کے ساتھ باہمی سول جوہری تعاون کے وعدے پر عمل پیرا ہے اور بھارت میں 6 جوہری تنصیبات لگانا چاہتا ہے۔کرنٹ نیوز آف انڈیا مانیٹرنگ کے مطابق امریکا نے بھارت کو یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ نئی دہلی کے ساتھ باہمی سول جوہری تعاون کے وعدے پر عمل پیرا ہے اور بھارت میں 6 جوہری تنصیبات لگانا چاہتا ہے۔ امریکا نے یہ یقین دہانی واشنگٹن میں ہونے والے 9ویں امریکا بھارت اسٹریٹجک سیکیورٹی ڈائیلاگ میں کرائی. بھارت کے سیکرٹری خارجہ وجے گوکھلے اور امریکا کے انڈر سیکرٹری آف اسٹیٹ برائے آرمز کنڑول اینڈ انٹرنیشنل سیکیورٹی اینڈریا تھومپسن نے اجلاس کی قیادت کی۔امریکی نشریاتی ادارے کے مطابق ڈائیلاگ کے بعد مشترکہ اعلامیہ میں کہا گیا کہ ’انہوں نے باہمی سیکیورٹی اور سول جوہری تعاون کو مزید بڑھانے کے عزم کا اظہار کیا جس میں بھارت میں 6 امریکی جوہری تنصیبات کا قیام بھی شامل ہے تاہم انہوں نے اس کی مزید وضاحت نہیں دی. اجلاس میں دونوں ممالک میں عالمی سیکیورٹی کے چیلنجز پر تبادلہ خیال کیا گیا اور ہتھیاروں کے پھیلا? اور دہشت گردوں تک ان کی رسائی کو روکنے کے لیے مل کر کام کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی‘مشترکہ اعلامیے میں امریکا نے بھارت کی نیوکلیئر سپلائرز گروپ میں رکنیت میں تعاون کی یقین دہانی بھی کرائی۔12 مارچ کو بھارت کے ایڈیشنل سیکریٹری برائے عالمی سیکیورٹی امور ڈاکٹر یلیم ڈی ایس اور سیکرٹری برائے تخفیف اسلحہ اندرا مانی پانڈے، امریکی اسسٹنٹ سیکرٹری آف اسٹیٹ برائے آرمز کنٹرول نے مشترکہ طور پر امریکا بھارت اسپیس ڈائیلاگ کے تیسرے مرحلے کی صدارت کی تھی. امریکا اور بھارت ملک میں جوہری تنصیبات لگانے پر بات چیت ایک دہائی سے کر رہے ہیں تاہم بھارت کے قوانین کو بین الاقوامی قوانین کے مطابق بنانے کی ضرورت اس کام میں تاخیر کا سبب بنتی رہی ہے۔بھارت کے موجودہ قوانین کے مطابق جوہری تنصیبات لگانے والا ہی حادثے کی صورت میں تمام اخراجات برداشت کرے گا. امریکا کی خواہش ہے کہ اس قانون میں تبدیلی کرتے ہوئے تنصیبات لگانے والے کے بجائے اسے چلانے والے کو حادثے کے تمام اخراجات اٹھانے کا قانون چاہتا ہے۔

تبصرے
Loading...